جی میں کیا کیا خیال آتا ہے

دیوان اول غزل 542
یاں جو وہ نونہال آتا ہے
جی میں کیا کیا خیال آتا ہے
اس کے چلنے کی آن کا بے حال
مدتوں میں بحال آتا ہے
پر تو گذرا قفس ہی میں دیکھیں
اب کے کیسا یہ سال آتا ہے
شیخ کی تو نماز پر مت جا
بوجھ سر کا سا ڈال آتا ہے
آرسی کے بھی گھر میں شرم سے میر
کم ہی وہ بے مثال آتا ہے
میر تقی میر