جو ہو شمار دم میں اس کی امید کیا ہے

دیوان اول غزل 661
مایوس وصل اس کا چتون میں مت کہو تم
جو ہو شمار دم میں اس کی امید کیا ہے
میر تقی میر