جلوہ مری گور پر نہ ہووے

دیوان اول غزل 557
جب تک کہ ترا گذر نہ ہووے
جلوہ مری گور پر نہ ہووے
لے تیغ و سپر کو تو جدھر ہو
خورشید کا منھ ادھر نہ ہووے
گھر دود جگر سے بھر گیا آہ
کب تک مری چشم تر نہ ہووے
رونے کی ہے جاگہ آہ کریے
پھر دل میں ترے اثر نہ ہووے
بیمار رہے ہیں اس کی آنکھیں
دیکھو کسو کی نظر نہ ہووے
رکتی نہیں تیغ نالہ ہرگز
جب تک کہ جگر سپر نہ ہووے
کر بے خبر اک نگہ سے ساقی
لیکن کسو کو خبر نہ ہووے
خستے ترے موے عنبریں کے
کیونکر جئیں صبر گر نہ ہووے
رکھ دیکھ کے راہ عشق میں پاے
یاں میر کسو کا سر نہ ہووے
میر تقی میر