تہ کر گیا مصلیٰ عزلت گزیدگاں کا

دیوان اول غزل 134
آیا تھا خانقہ میں وہ نور دیدگاں کا
تہ کر گیا مصلیٰ عزلت گزیدگاں کا
آخر کو خاک ہونا درپیش ہے سبھوں کو
ٹک دیکھ منھ کدھر ہے قامت خمیدگاں کا
جو خار دشت میں ہے سوچشم آبلہ سے
دیکھا ہوا ہے تیرے محنت کشیدگاں کا
اب زیرخاک رہنا مشکل ہے کشتگاں کو
آرام کھو چلا تو ان آرمیدگاں کا
تیر بلا کا ہر دم اب میر ہے نشانہ
پتھر جگر ہے اس کے آفت رسیدگاں کا
میر تقی میر