تلووں تک وہ داغ گیا ہے سب مجھ کو کھا جیسے شمع

دیوان چہارم غزل 1411
ایک ہی گل کا صرف کیا ہے میں نے سراپا جیسے شمع
تلووں تک وہ داغ گیا ہے سب مجھ کو کھا جیسے شمع
میر تقی میر