تلوار کا سا گھاؤ ہے جبہے کا ہر خراش

دیوان پنجم غزل 1638
غصے میں ناخنوں نے مرے کی ہے کیا تلاش
تلوار کا سا گھاؤ ہے جبہے کا ہر خراش
صحبت میں اس کی کیونکے رہے مرد آدمی
وہ شوخ و شنگ و بے تہ و اوباش و بدمعاش
بے رحم تجھ کو ایک نظر کرنی تھی ادھر
کشتے کے تیرے ٹکڑے ہوئے لے گئے بھی لاش
آباد اجڑا لکھنؤ چغدوں سے اب ہوا
مشکل ہے اس خرابے میں آدم کی بودو باش
عمرعزیز یاس ہی میں جاتی ہے چلی
امیدوار اس کے نہ ہم ہوتے میر کاش
میر تقی میر