ترے غم کو اکیلا چھوڑ کر پیارے کہاں جائوں

دیوان اول غزل 368
ہمیشہ دل میں کہتا ہوں یہاں جائوں وہاں جائوں
ترے غم کو اکیلا چھوڑ کر پیارے کہاں جائوں
لگی آتی ہے واں تک تیرے دامن کی ہوا اڑ کے
میں یہ مشت غبار اپنا چھپانے کو جہاں جائوں
ادھر صحراے بیتابی ادھر مشہد ہے اے قاتل
جو فرماوے تو واں جائوں جو فرماوے تو یاں جائوں
اگر جیتا رہا اے زلف تو میں میر ہوں سنیو
بلاے ناگہانی کے سر اوپر ناگہاں جائوں
میر تقی میر