تا بت خانہ ہر قدم اوپر سجدہ کرتا جائوں گا

دیوان پنجم غزل 1549
شیخ حرم سے لڑکے چلا ہوں اب کعبے میں نہ آئوں گا
تا بت خانہ ہر قدم اوپر سجدہ کرتا جائوں گا
بہر پرستش پیش صنم ہاتھوں سے قسیس رہباں کے
رشتہ سبحہ تڑائوں گا زنار گلے سے بندھائوں گا
رود دیر کے پانی سے یا آب چاہ سے اس جا کے
واسطے طاعت کفر کے میں دونوں وقت نہائوں گا
طائف رستہ کعبے کا جو کوئی مجھ سے پوچھے گا
جانب دیر اشارت کر میں راہ ادھر کی بھلائوں گا
بے دیں اب جو ہوا سو ہوا ہوں طوف حرم سے کیا مجھ کو
غیر از سوے صنم خانہ میں رو نہ ادھر کو لائوں گا
آگے مسافر میر عرب میں اور عجم میں کہتے ہیں
اب شہروں میں ہندستاں کے کافر میر کہائوں گا
میر تقی میر