بے درد سر بھی صبح تلک سر دھنا کیا

دیوان اول غزل 151
قصہ تمام میر کا شب کو سنا کیا
بے درد سر بھی صبح تلک سر دھنا کیا
مل چشم سے نگہ نے دھتورا دیا مجھے
خس بھر نہ چھوڑا دل کو میں تنکے چنا کیا
میر تقی میر