بیتاب کر کے خاک میں ہم کو ملا گئے

دیوان اول غزل 644
مدت ہوئی کہ تاب و تواں جی چھپا گئے
بیتاب کر کے خاک میں ہم کو ملا گئے
وے دن گئے کہ آٹھ پہر اس کے پاس تھے
اب آگئے تو دور سے کچھ غم سنا گئے
میر تقی میر