اک مغبچہ اتار کے عمامہ لے گیا

دیوان اول غزل 32
مفت آبروے زاہد علامہ لے گیا
اک مغبچہ اتار کے عمامہ لے گیا
داغ فراق و حسرت وصل آرزوے شوق
میں ساتھ زیر خاک بھی ہنگامہ لے گیا
پہنچا نہ پہنچا آہ گیا سو گیا غریب
وہ مرغ نامہ بر جو مرا نامہ لے گیا
اس راہزن کے ڈھنگوں سے دیوے خدا پناہ
اک مرتبہ جو میر جی کا جامہ لے گیا
میر تقی میر