آزردہ دل ستم زدہ دل بے قرار دل

دیوان اول غزل 272
رہتا نہیں ہے کوئی گھڑی اب تو یار دل
آزردہ دل ستم زدہ دل بے قرار دل
میر تقی میر