آتش کا ایسا لائحہ کب ہے زباں دراز

دیوان پنجم غزل 1628
سرکش ہے تندخو ہے عجب ہے زباں دراز
آتش کا ایسا لائحہ کب ہے زباں دراز
پروانہ تیری چرب لساں سے ہوا ہلاک
ہے شمع تو تو کوئی غضب ہے زباں دراز
میر تقی میر