اس عشق کی وادی میں ہر نوع بسر کرنا

دیوان پنجم غزل 1564
سر مارنا پتھر سے یا ٹکڑے جگر کرنا
اس عشق کی وادی میں ہر نوع بسر کرنا
کہتے ہیں ادھر منھ کر وہ رات کو سوتا ہے
اے آہ سحرگاہی ٹک تو بھی اثر کرنا
دیواروں سے سر مارا تب رات سحر کی ہے
اے صاحب سنگیں دل اب میری خبر کرنا
میر تقی میر