اس رو کا مثل آئینہ حیراں ہوا نہ تو

دیوان چہارم غزل 1472
دل اس کے مو سے لگ کے پریشاں ہوا نہ تو
اس رو کا مثل آئینہ حیراں ہوا نہ تو
صد رنگ بحث رہتی ہے یاں ذی شعور سے
اے وائے عقلمند کہ ناداں ہوا نہ تو
نزدیک حق کے دین تو اسلام بن ہے کفر
اے برہمن دریغ مسلماں ہوا نہ تو
کتنے دنوں کہا تھا دلا ضبط نالہ کر
پھر شب کو ناشکیبی سے نالاں ہوا نہ تو
ہوتا ہے میر روے سخن آدمی کی اور
افسوس اے ستم زدہ انساں ہوا نہ تو
میر تقی میر