اب کہو اس شہر نا پرساں سے کیدھر جایئے

دیوان اول غزل 551
مہوشاں پوچھیں نہ ٹک ہجراں میں گر مر جایئے
اب کہو اس شہر نا پرساں سے کیدھر جایئے
کام دل کا کچھ ٹھکانا ہی نہیں کیونکر بنے
آیئے تاچند ناامید پھر کر جایئے
مضطرب اس آستاں سے اٹھ کے کچھ پایا نہ رو
منھ رہا ہے کیا جو پھر اب اس کے در پر جایئے
بعد طوف قیس ہوجے زائر فرہاد بھی
دشت سے اٹھے تو کوہوں میں مقرر جایئے
شوق تھا جو یار کے کوچے ہمیں لایا تھا میر
پائوں میں طاقت کہاں اتنی کہ اب گھر جایئے
میر تقی میر