اب کم بہت ہے ہم پہ عنایات کیا سبب

دیوان پنجم غزل 1580
باہم ہوئی ہے ترک ملاقات کیا سبب
اب کم بہت ہے ہم پہ عنایات کیا سبب
ہم تو تمھارے حسن کی حیرت سے ہیں خموش
تم ہم سے کوئی کرتے نہیں بات کیا سبب
ہم تیرہ روز آپ سے تم بن سحر گئے
آئے نہ تم ہمارے کنے رات کیا سبب
اس کی نگاہ مست تو اودھر نہیں پڑی
مسجد جو ہو گئی ہے خرابات کیا سبب
تھا مرتبہ ہمیشہ سگ یار کا بلند
ہے میر سے سلوک مساوات کیا سبب
میر تقی میر