اب دماغ اڑتا ہے باتوں میں کہ ہوں بیمار دل

دیوان چہارم غزل 1430
مت کرو شور و فغاں سے طائرو آزار دل
اب دماغ اڑتا ہے باتوں میں کہ ہوں بیمار دل
رنج و غم بھی کھینچنے کے دن تو یارو ہوچکے
اب نہیں جاتی اٹھائی کلفت بسیار دل
میر تقی میر