عشق کو حسن بنا دے وہ کرشمہ ہے بہت

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 81
دار پر اس کی گواہی کا ہے حوالہ ہے بہت
عشق کو حسن بنا دے وہ کرشمہ ہے بہت
ناتوانی کو توانائی کا یہ معجزہ ہے
ہر ہلاکو کے لئے ایک فلوجہ ہے بہت
اے انا الوقت! محبت کے کسی روپ میں آ
خود کو برباد نہ کر لوں، مجھے خطرہ ہے بہت
حسن دریا ہے میری آنکھ میں گرنے والا
پھر بھی پیاسا ہوں اگرچہ تجھے دیکھا ہے بہت
اتنا سادہ ہوں تو کچھ وجہ بھی ہو گی شاید
ضبط میں میری انا نے مجھے رکھا ہے بہت
اور اس وہم سے بھی جا کے نمٹ لے پیارے
شہرِ فردا میں سنا ہے ترا چرچا ہے بہت
زندگی جیسے سبھی موسموں کا میلہ ہو
سیر کے واسطے یہ گلشنِ دنیا ہے بہت
آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s