باقی سب خیریت ہے

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 71
جینا ایک اذیت ہے
باقی سب خیریت ہے
ہم نے جی کر دیکھ لیا
مرنے میں عافیت ہے
سب نقلوں کی نقلیں ہیں
اور یہی اصلیت ہے
وقت کے لاتعدادوں میں
کس کی کیا حیثیت ہے
معنی کے بھی معنی ہیں
یعنی سب رمزیت ہے
اس میں رنگِ مے بھرے لے
منظر بے کیفیت ہے
گھر میں بھی اور باہر بھی
یار! بڑی بوریت ہے
آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s