کرتا ہوں زندگی ولے نا چاریوں کے ساتھ

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 14
کچھ مصلحت بھی جوڑ کے خود داریوں کے ساتھ
کرتا ہوں زندگی ولے نا چاریوں کے ساتھ
خوشحال ہو گئے ہیں مگر خود کو بیچ کر
آسانیاں بھی جھیلئے دشواریوں کے ساتھ
لگتی نہیں تھیں ایڑیاں جس کی زمین پر
بیٹھا ہوا ہے فرش کی ہمواریوں کے ساتھ
سونے دیا نہ جاگنے والے کے خبط نے
یہ رات بھی کٹی بڑی بیزاریوں کے ساتھ
تنہائیوں کا کنج معطر ہے اس لئے
چلتی ہے میری سانس مری یاریوں کے ساتھ
دورِ بعید شاہ پرستی کا فرد ہوں
پھر کیا ہو واسطہ مرا درباریوں کے ساتھ
آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s