صحیح ہوا ہے نہ ہو گا بگاڑ عمروں کا

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 15
یہی کہ سہم اٹھاؤ اجاڑ عمروں کا
صحیح ہوا ہے نہ ہو گا بگاڑ عمروں کا
تجھے پتہ تو چلے اصل واقعہ کیا ہے
غبار چہرۂ ہستی سے جھاڑ عمروں کا
پڑی ہیں بیڑیاں پاؤں میں اپنے ہونے کی
رواں ہوں پشت پہ لا دے پہاڑ عمروں کا
سفر بھی ہونے نہ ہونے کا اک تسلسل ہے
یہاں لگا، وہاں خیمہ اکھاڑ عمروں کا
یہاں سے دیکھ تماشا ہجوم رفتہ کا
بدن سے جامۂ نازیب پھاڑ عمروں کا
نہ ہو یہ وقت پیامِ بقا کے آنے کا!
لہذا کھول کے رکھو کواڑ عمروں کا
آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s