دل کہیں پر اور کہیں پر ذہن تھا بھٹکا ہوا

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 13
راہ کی بے سمتیوں کا ہر گھڑی کھٹکا ہوا
دل کہیں پر اور کہیں پر ذہن تھا بھٹکا ہوا
چاندنی جیسی کوئی شے پی کے نکلیں سیر کو
جب ستاروں سے ہو باغِ آسماں چٹکا ہوا
چشم و لب پر مُسکراتی رغبتیں تسخیر کی
اور گردن میں سنہرا سا فسوں لٹکا ہوا
رہ گیا آنکھوں میں وُہ نقشِ تمام و ناتمام
طرۂ کا کُل رُخِ دیوار پر جھٹکا ہوا
ٹوٹ کر جینے کی حسرت میں جیا ہوں اس طرح
جیسے بچّے کی زباں پر لفظ ہو اٹکا ہوا
آنکھ میں سپنا ترا اُترا تو اس سے پیشتر
کچھ گماں سا کاسنی رنگوں کی آہٹ کا ہوا
آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s