بے نیازیاں اُسکی، ہو کے آبدیدہ لکھ

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 16
بات ایک جیسی ہے، ہجو یا قصیدہ لکھ
بے نیازیاں اُسکی، ہو کے آبدیدہ لکھ
جمع کر یہ آوازیں میری خود کلامی کی
اور ان کی املا سے درد کا جریدہ لکھ
ذہن کی ہدایت ہے، کاتب زمانہ کو
عقل کی دلیلوں سے آج کا عقیدہ لکھ
رنگ و روشنائی کی حدِّ اوج سے اوپر
ہو سکے تو اندازاً قامتِ کشیدہ لکھ
دیکھ اِن خلاؤں میں نقطہ ہائے نور اُس کے
تو بھی ایک خالق ہے شعر چیدہ چیدہ لکھ
آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s