دن میں سپنے دیکھنا، آنکھوں کا معمول

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 1
اک کیفیت پیاس کی، دائم ہمیں قبول
دن میں سپنے دیکھنا، آنکھوں کا معمول
ایک پیالہ دھوپ کا، پی کر ہوئے نہال
سائیں ترے بام سے، اُترا کون ملول
منظر میری آنکھ کا، تیری شام کا رنگ
سرخ شفق کی جھیل میں ، زرد کنول کا پھول
دیکھا تیرے بھیس میں اپنا پہلا رُوپ
آئی دل کے بھید میں ، صدیاں گہری بھول
دستک ہے پیغام کی، کھولو ہند کواڑ
اُڑتے دیکھو دور تک، روشنیوں کی دھول
دیکھو تو اُس شخص کے، ہونے کے انداز
جیسے دکھ کی دھوپ میں ، پیلا سبز ببول
آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s