یاس

بربط دل کے تار ٹوٹ گئے

ہیں زمیں بوس راحتوں کے محل

مٹ گئے قصہ ہائے فکر و عمل

بزم ہستی کے جام پھوٹ گئے

چھن گیا کیف کوثر و تسنیم

زحمت گریہ و بکا بے سود

شکوۂ بخت نارسا بے سود

ہوچکا ختم رحمتوں کا نزول

بند ہے مدتوں سے باب قبول

بے نیاز دعا ہے رب کریم

بجھ گئی شمع آرزوئے جمیل

یاد باقی ہے بے کسی کی دلیل

انتظار فضول رہنے دے

راز الفت نباہنے والے

بار غم سے کراہنے والے

کاوش بے حصول رہنے دے

فیض احمد فیض

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s