سوچ

کیوں میرا دل شاد نہیں ہے

کیوں خاموش رہا کرتا ہوں

چھوڑو میری رام کہانی

میں جیسا بھی ہوں اچھا ہوں

میرا دل غمگیں ہے تو کیا

غمگیں یہ دنیا ہے ساری

یہ دکھ تیرا ہے نہ میرا

ہم سب کی جاگیر ہے پیاری

تو گر میری بھی ہوجائے

دنیا کے غم یونہی رہیں گے

پاپ کے پھندے،ظلم کے بندھن

اپنے کہے سے کٹ نہ سکیں گے

غم ہر حالت میں مہلک ہے

اپنا ہو یا اور کسی کا

رونا دھونا جی کو جلانا

یوں بھی ہمارا، یوں بھی ہمارا

کیوں نہ جہاں کا غم اپنالیں

بعد میں سب تدبیریں سوچیں

بعد میں سکھ کے سپنے دیکھیں

سپنوں کی تعبیریں سوچیں

بے فکرے دھن دولت والے

یہ آخر کیوں خوش رہتے ہیں

ان کا سکھ آپس میں بانٹیں

یہ بھی آخر ہم جیسے ہیں

ہم نے مانا جنگ کڑی ہے

سر پھوٹیں گے، خون بہے گا

خون میں غم بھی بہہ جائیں گے

ہم نہ رہیں، غم بھی نہ رہے گا

فیض احمد فیض

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s