گدلے پانی۔۔۔

جو بھی بہتے دریا سے اپنا چلّو بھر لے، یہ دریا اس کا ہے

اپنی سب پاکیزگیوں کے ساتھ اس کا ہے

چاہے اس پانی میں جیسے بھی جوہر ہوں

اچھے برے جوہر، جو دریا کی سیال حقیقت میں اک ساتھ پنپ کر

بجھ کر، تپ کر، یوں ظاہرہیں، سب طاہر ہیں

جس کی پیاس کو اس پانی پر حق ہو

اسے بھلا کیوں شک ہو کہ ان قطروں میں مقیّد ہیں، وہ جوہر جو جیّد ہیں

دل میں پانی کی ٹھنڈک یہ کہتی ہے کہ طلب کا جو حاصل بھی ہے طیب ہے

ٹھنڈک پانے والا اسی یقین کے بل پر

اپنے گمان میں خوشیوں کی اس موج سے اپنی روح کے جوہڑ بھر لیتا ہے

جس کی چھلک اس کی آنکھوں کے ڈوروں تک آتی ہے

کتنے چہروں پر ہے اپنے آپ میں کافی ہونے کی اک یہ کیفیت

ان قدروں کی اچھی سی اک دین کہ جن کے مقدس دریا

سب گدلے ہیں!

مجید امجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s