دامنِ دل

سدا رہے یہ دھلا دھلا اور ستھرا ستھرا

زندہ

اپنے وجود کی اصلیت سے منور

اس پر میل نہ رہنے پائے

اس کو گتھ دے

اس کو سل پہ پٹخ دے

اس کو توڑ مروڑ نچوڑ دے، کس دے

اس کو جھٹک دے

اس کی گیلی شکنیں چن لے

اس کو سچے سُکھ میں سُکھا!

مجید امجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s