میرے خدا، مرے دل!

مرے ضمیر کے بھیدوں کو جاننے والے

تجھے تو اس کی خبرہے، مرے خدا، مرے دل

کہ میں ان آندھیوں میں عمر بھر جدھر بھی بہا

کوئی بھی دھن تھی، میں اس لہر کی گرفت میں تھا

جو تیری سوچ کی سچائیوں میں کھولتی ہے

ہے جس کی رو میں تری ضو، مرے خدا، مرے دل

مرے لہو میں تری لو ہے دھڑکنوں کا الاؤ

تجھے تو اس کی خبر ہے، مرے خدا، مرے دل

کہ اس طلسمِ زیاں کے کسی جھمیلے میں

ذرا کبھی جو قدم میرے ڈگمگا بھی گئے

تو اک خیال، ابد موج سلسلوں کا خیال

مرے وجود میں چنگاریاں بکھیر گیا

سنبھل کے دیکھا تو دنیا میں اور کچھ بھی نہ تھا

نہ دکھتی سانس کے ارماں، نہ جیتی مٹی کے لوبھ

نہ کوئی روگ، نہ چنتا، نہ میں، نہ مرے جتن

جو مجھ میں تھا بھی کوئی گُن، ترے ہی گیان سے تھا

کچھ اور ڈوب کے گہرائیوں میں جب دیکھا

تو ہر سلگتی ہوئی قدر کے مقدر میں

نہاں تھے تیرے تقاضے، مرے خدا، مرے دل

ہیں تیری کرنوں میں کڑیاں چمکتے قرنوں کی

تجھے تو اس کی خبر ہے، مرے خدا، مرے دل

کہ اس کرے پہ ہے جو کچھ بھی، اس کے پہلو میں ہیں

وہ شعلے جن پہ شکن ہے تری ہی کروٹ کی

ترے ہی دائرے کا جزو ہیں وہ دور کہ جب

چٹانیں پگھلیں، ستارے جلے، زمانے ڈھلے

وہ گردشیں جنھیں اپنا کے ان گنت سورج

ترے سفر میں بجھے تو انھی اندھیروں سے

دوامِ درد کی اک صبح ابھری، پھول کھلے

مہک اٹھی تری دنیا، مرے خدا مرے دل

گھلا ہوا مری سانسوں میں ہے سفر تیرا

تجھے تو اس کی خبر ہے، مرے خدا، مرے دل

کہ گو یہی میرا پیکر ضمیرِ خاک سے ہے

مگر اسی مرے تپتے بدن کی بھٹی سے

کشید ہوتی ہوئی ایک ایک ساعتِ زیست

وہ گھونٹ زہر کا ہے جو مجھی کو پینا پڑا

یہ زہرکون پیے؟ کون اپنے سینے میں

یہ آگ انڈیل کے ان ساحلوں سے بھید چنے

جہاں پہ بکھرے ہیں صدہا صداقتوں کے صدف

یہ زہر کون پیے؟ کون بجھتی آنکھوں سے

غروبِ وقت کی خندق کے پار دیکھ سکے

جہاں ازل کے بیاباں میں عمر پیما ہے

حقیقتوں کا وہ دھارا کہ جس کی لہروں میں آج

گلوں کا رس بھی ہے، فولاد کا پسینہ بھی

مرا شعور انھی گھاٹیوں میں بھٹکا ہے

قدم قدم پر مری ٹھوکروں کی زد میں رہیں

کرخت ٹھیکریاں ان کٹھور ماتھوں کی

جو زندگی میں ترے آستاں پہ جھک نہ سکے

قدم قدم پہ سیہ فاصلوں کے سنگم پر

بس اک مجھی کو اس اَن مِٹ تڑپ سے حصہ ملا

تری جرس کی صدا میں ہیں رت جگے جس کے

یہی تڑپ تری کایا، یہی تڑپ مرا انت

جو انت بھی ہو سو ہو، میں تو مٹتی مٹی ہوں

دھڑکتی ریت کے بےانت جھکڑوں میں سدا

رواں رہیں ترے محمل! مرے خدا، مرے دل

تری ہی آگ کی میٹھی سی آنچ ہیں مرے دکھ

یہ راز تو ہی بتا اب، مرے خدا، مرے دل

یہ بات کیا کہ ترے بےخزاں خزانوں سے

جو کچھ ملا بھی ہے تو مجھ کو اک یہ ریزۂ درد

ہیں جس کی جھولی میں کھلیان تیرے شعلوں کے

اور اب کہ سامنے جلتی حدوں کی سرحد ہے

ہر ایک سمت مری گھات میں ہیں وہ روحیں

جو اپنے آپ میں اک راکھ کا سمندر ہیں

یہ روحیں، بِس بھرے، ذی جسم، آہنیں سائے

انھی کے گھیرے میں ہیں اب یہ بستیاں، یہ دیار

کہیں یہ سائے جو پتھرائی آرزوؤں کو

سرابِ زر کی کشش بن کے گدگداتے ہیں

مری لگن کو نہ ڈسنے لگیں، میں ڈرتا ہوں

کہیں یہ سائے، یہ کیچڑ کی مورتیں، جن کے

بدن کے دھبوں پہ رختِ حریر کی ہے پھبن

مری کرن کی نہ چھب نوچ لیں، میں ڈرتا ہوں

کہیں یہ آگ نہ بجھ جائے جس کے انگ میں ہیں

ترے دوام کی انگڑائیاں، میں سوچتا ہوں

نہیں، یہ ہو نہ سکے گا! جو یوں ہوا بھی تو پھر؟

نہیں! ابھی تو یہ اک سانس! ابھی تو ہے کیا کچھ!

ابھی تو جلتی حدوں کی حدیں ہیں لامحدود

ابھی تو اس مرے سینے کے ایک گوشے میں

کہیں، لہو کے تریڑوں میں، برگِ مرگ پہ اک

کوئی لرزتا جزیرہ سا تیرتا ہے جہاں

ہر اک طلب تری دھڑکن میں ڈوب جاتی ہے

ہر اک صدا ہے کوئی دور کی صدا، مرے دل

مرے خدا، مرے دل

مجید امجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s