صبح کے اجالے میں

تو نے، ہم سفر، دیکھا

صبح کے اجالے میں

راہ کا سہاناپن!

دائیں بائیں، دورویہ

شادماں درختوں کی

جھومتی قطاریں ہیں

ہر قدم کے وقفے پر

دھوپ کی خلیجیں ہیں

چھاؤں کے جزیرے ہیں

جس طرف کو سورج ہے

اس طرف درختوں کی

شبنمیں جبینوں پر

تیرگی کا پرتو ہے!

تیرگی کے پرتو کا

رخ ہماری جانب ہے

جس طرف کو سورج ہے

اس کی دوسری جانب

سربلند پیڑوں کی

شبنمیں جبینوں پر

روشنی کے پرتو کا

رخ ہماری جانب ہے

تو نے، ہم سفر، دیکھا

دھوپ ہے کہ سایا ہے

رہرووں کی مایا ہے

دور دور تک — رستا

دور دور تک — دنیا

دور دور تک — سب کچھ

اک عجب سہاناپن —

صبح کے اجالے میں

مجید امجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s