ریڈنگ روم

میز پر اخبار کے پھیلے ورق

بکھرے بکھرے، تیرہ تیرہ، چاک چاک

ڈھل گئی ہے قالبِ الفاظ میں

سینۂ ہستی کی آہِ دردناک

پاس ہی دیوار کو ٹیکے ہوئے

ریڈیو گرمِ سخن، محوِ بیاں

چیختی ہیں جامۂ آواز میں

خون کے چھینٹے، لہو کی بوندیاں

شام ریڈنگ روم کی مغموم شام

چند کان اعلانچی کی بات پر

چند آنکھیں سوچ میں ڈوبی ہوئیں

مرتکز اخبار کے صفحات پر

ایک کمرے میں سمٹ کر آ گئے

کتنے دکھڑوں کے صدا پیکر حروف

کتنے دردوں کے مسطّر زمزے

کتنے اندھے گیانی، بہرے فیلسوف!

پھر بھی کچھ ادراک میں آتا نہیں

کیا ہے رقصِ گردشِ ایام، کیا!

اک شکستہ ناؤ، اک خونی بھنور

کیا ہے اس افسانے کا انجام، کیا؟

یہ مفکر کچھ سمجھ سکتے نہیں!

چھت کے نیچے، روزنوں کے درمیان

گول گول آنکھوں کے اندر محوِ دید

کالے پارے کی مرقص پتلیاں

کاش یہ حیراں کبوتر جانتے

خفتہ ہے ان کاغذوں کی سطح پر

کتنے پھنکتے آشیانوں کا دھواں

کتنے نخچیروں کی آہوں کے شرر

ہیں ان آوازوں کے اندر پرکُشا

کتنے کرگس، جن کو مرداروں کی بو

کھینچ لائی ہے سرِ دیوارِ باغ!

چھت کے نیچے، مضطرب، نظارہ خو

فکرمند آنکھوں میں حیراں پتلیاں

یہ کبوتر، دیکھتے تھکتے نہیں

دیکھتے ہیں، سوچتے ہیں، کیا کریں

یہ مفکر کچھ سمجھ سکتے نہیں!

مجید امجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s