نژادِ نو

برہنہ سر ہیں، برہنہ تن ہیں، برہنہ پا ہیں

شریر روحیں

ضمیرِ ہستی کی آرزوئیں

چٹکتی کلیاں

کہ جن سے بوڑھی، اداس گلیاں

مہک رہی ہیں

غریب بچے کہ جو شعاعِ سحرگہی ہیں

ہماری قبروں پہ گرتے اشکوں کا سلسلہ ہیں

وہ منزلیں جن کی جھلکیوں کو ہماری راہیں

ترس رہی ہیں

انہی کے قدموں میں بس رہی ہیں

حسین خوابوں

کی دھندلی دنیائیں جو سرابوں

کا روپ دھارے

ہمارے احساس پر شرارے

انڈیلتی ہیں

انہی کی آنکھوں میں کھیلتی ہیں

انہی کے گم سم

اداس چہروں پر جھلملاتے ہوئے تبسم

میں ڈھل گئے ہیں ہمارے آنسو، ہماری آہیں

طویل تاریکیوں میں کھو جائیں گے جب اک دن

ہمارے سائے

اس اپنی دنیا کی لاش اٹھائے

تو سیلِ دوراں

کی کوئی موجِ حیات ساماں

فروغِ فردا

کا رخ پہ ڈالے مہین پردا

اچھل کے شاید

سمیٹ لے زندگی کی سرحد

کے اس کنارے

یہ گھومتے عالموں کے دھارے

یہ سب بجا ہے، بجا ہے، لیکن۔۔۔

یہ توتلی نوخرام روحیں کہ جن کی ہر سانس انگبیں ہے

اگرانہی کونپلوں کی قسمت میں نازِ بالیدگی نہیں ہے

تو بہتی ندیوں

میں آنے والی ہزار صدیوں

کا یہ تلاطم

سکوتِ پیہم کا یہ ترنم

یہ جھونکے جھونکے

میں کھلتے گھونگھٹ نئی رتوں کے

تھکی خلاؤں

میں لاکھ اَن دیکھی کہکشاؤں

کی کاوشِ رم

ہزار ناآفریدہ عالم۔۔۔

تمام باطل

نہ ان کا مقصد نہ ان کا حاصل

اگر انھی کونپلوں کی قسمت میں نازِ بالیدگی نہیں ہے

مجید امجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s