روشنی لکھتی ہے اسمائے گرامی تیرے

عرفان صدیقی ۔ غزل نمبر 268
سب لقب پاک ہیں سب نام ہیں نامی تیرے
روشنی لکھتی ہے اسمائے گرامی تیرے
حرف حق تیرے حوالے سے اجالے کا سراغ
لفظ پائندہ ترے‘ نقش دوامی تیرے
اذن معبود کا مقصود بھی نصرت تیری
مصحف نور کے آیات بھی حامی تیرے
سب ستارہ نظراں‘ خوش ہنراں‘ چارہ گراں
پیک تیرے‘ سفری تیرے‘ پیامی تیرے
بے اماں قریوں پہ دائم تیری رحمت کا نزول
حبشی تیرے‘ حجازی ترے‘ شامی تیرے
تو غزالوں کو کمندوں سے بچانے والا
سارے سلطان غلامانِ قیامی تیرے
کشت سرسبز ترے فیض کی ہریالی سے
دشت میں نخلِ نمودار تمامی تیرے
میرے الفاظ فقط عجز بیاں کا اقرار
کعب و حسان ترے، سعدی و جامی تیرے
نوریاں مدح سرا خاک نہادوں کی مثال
کہیں محسن‘ کہیں جبریل سلامی تیرے
سب تری مملکت جود و کرم میں آباد
حکم نافذ مرے قوسین مقامی تیرے
عرفان صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s