یہ وہ دھرتی نہیں ہے

نہیں یہ وہ دھرتی نہیں ہے

نہیں یہ وہ دھرتی نہیں ہے جہاں میرا بچپن

مرا تتلیوں ، پھولوں ، رنگوں سے لبریز بچپن

کسی شاہزادی کی رنگیں کہانی کی حیرت میں گم تھا

نہیں یہ وہ دھرتی نہیں ہے

جہاں میری آنکھوں …

بہت خواب بُنتی ہوئی میری شفاف آنکھوں

میں اوّل جوانی کا احساس ہلکورے لینے لگا تھا

وہ گوشہ جہاں بیٹھ کر میں نے پہروں

کتابیں پڑھی تھیں

درختوں پہ، پھولوں پہ، چڑیوں پہ

نظمیں کہی تھیں

نہیں یہ وہ دھرتی نہیں ہے

جہاں میرے دل پر

مرے کورے ، معصوم دل پر

کسی شرمگیں اُجلی ساعت نے

اِسم محبت لکھا تھا

جہاں زندگی کو برس در برس

میں نے کھل کر جیا تھا

گلناز کوثر

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s