کیا رکھا ہے

چھوڑو کیا رکھا ہے … اب یہ چھوٹی چھوٹی

چبھنے والی … نوکیلی سی باتیں

تم کیا ڈھونڈ رہے ہو

نہیں یہاں اب کچھ بھی نہیں ہے

سچ کہتے ہو درد بڑا تھا

لیکن اب تو کچھ بھی نہیں ہے

آخری منظر کیا دیکھا تھا

اندھی رُت اور گہرے سائے

ارے ذرا نرمی سے

نازک پھول سا لمحہ

کیا ہے جو اَب شاخ سے ٹوٹ کے گرنے لگا ہے

پھول تو پھول ہے … لیکن دل کچھ بھول رہا ہے

پلکوں کے پردوں کے پیچھے … کیا ہے … کیا ہے

آہ … یہاں اب کچھ بھی نہیں ہے

تم جو کل آتے تو … لیکن

سچ کہتے ہو

خاک اُڑاتے کمرے میں رکھا بھی کیا ہے

یونہی خالی بیٹھے بیٹھے دیر ہوئی ہے

دیکھو سورج ڈھلنے لگا ہے

کہاں چلو گے

شہر میں چاروں جانب سورج ڈھلنے لگا ہے

لیکن تم کیا دیکھ رہے ہو

دیر ہوئی ہے

میرے پتھر قدموں کے نیچے یہ دھرتی

رُکی ہوئی ہے

ہاں پر تم کہہ کر تو دیکھو

لیکن چھوڑو … کیا رکھا ہے

بس تم ہنستی کھیلتی ، چھوٹی چھوٹی باتیں کرتے رہو گے

سورج ڈھلتے ڈھلتے آخر ڈھل جائے گا

اور پرے دو پیڑ ہیولے بن جائیں گے …

گلناز کوثر

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s