اے حادثاتِ وقت کے خالق گزار خیر

منصور آفاق ۔ غزل نمبر 8
پاؤں سے دھرتی نکلی تو رکھے فلک پہ پیر
اے حادثاتِ وقت کے خالق گزار خیر
ہم لوگ ہیں زمیں پہ مسلسل کھڑی نماز
ہم نے رکھا نہیں ہے کبھی آسماں سے بیر
اس کرۂ کشش کے طلسمات توڑ دے
اے دجلۂ زمیں کے شناور ، خلا میں تیر
دنیا میں مال و زر کے سجودو رکوع سے
مسلم گزیدہ کعبہ ہے کافر گزیدہ دیر
وہ جانتے ہیں رات کی ساری کہا نیاں
سانسوں کے پل صراط پر دن بھر کریں جو سیر
منصور کہہ رہے ہیں عمل سے فلک شناس
ابلیس رشتہ دار ہمارا ، خدا ہے غیر
منصور آفاق

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s