رُوداد۔۔۔۔ ایک جلسے کی

نامولود زمانے کا

ہال بھرا تھا غیب کے سننے والوں سے

شام کو ہونے والی اس تقریبِ دُور نمائی میں

ہم نے بھی مضمون پڑھا

اُن صدیوں پر

جو ندی کے گھاٹ پہ بیٹھے

بہتی ریت سے ذرّہ ذرّہ

سونا چنتی رہتی ہیں

ویسے تو

ہم نے اِس مضمون کے اندر

معنی کے معنی دھونڈے تھے

لیکن دُور سے آنے والے

بے ساحل دریا کے راز شناسوں نے

ہر فقرے پر

بنچ بجا کر ہوٹنگ کی

آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s