گمان سے پہچان تک

کلی کی اوٹ سے ا۔س نے کیا اشارا مجھے

میں مُسکرایا

مساموں میں بجلیاں کوندیں

لہوکے دشت میں ٹاپیں سنائی دیں مجھ کو

گلابیاں سی ہوا میں دکھائی دیں مجھ کو

میں اپنی نظم بنا اور خود کو پڑھنے لگا

ہوا میں اُٹھتی ہوئی سیڑھیوں پہ چڑھنے لگا

گماں ہوا کہ قبا کھول دی ہے ساعت نے

بھنور نے سیپ کو پانی کی طشت پر اُلٹا

اندھیرا فاش ہوا روشنی کے بھید کھلے

عجیب وسعتیں پھیلیں خدائیوں کی سی

مٹھاس گھلنے لگی آشنائیوں کی سی

اُفق نے جھیل کو سمٹایا اپنی باہوں میں

تو زور زور سے کشتی کی سانس چلنے لگی

سفر کا نغمہ چھڑا بادباں کی دھڑکن پر

پیام آئے مجھے میری اپنی خوشبو کے

حیا سے سمٹی ہوئی اک صدا کی سرگوشی

مجھے بلانے لگی

پلٹ کے دیکھا تولہکتے ہاتھ کسی نیم وا درچے میں

ہلا رہے تھے بلاوے مِرے حوالوں کے

گلی کے موڑ پہ پہلا درخت پیپل کا

لپٹ گیا مجھ سے

میں بے پناہ کشش کی لپیٹ میں آیا

برس کے بوند گری، اشک ٹوٹ کے ٹپکا

قدیم اصل کے انبوہ کے سمندر میں

آفتاب اقبال شمیم

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s