گل غلط غنچے غلط خار غلط

باقی صدیقی ۔ غزل نمبر 78
کیوں صبا کی نہ ہو رفتار غلط
گل غلط غنچے غلط خار غلط
ہمنواؤں کی نہیں کوئی کمی
بات کیجے سربازراغلط
وقت الٹ دے نہ بساط ہستی
چال ہم چلتے ہیں ہر بار غلط
دل کے سودے میں کوئی سود نہیں
جنس ہے خام خریدار غلط
ہر طرف آگے لگی ہے باقیؔ
مشورہ دیتی ہے دیوار غلط
باقی صدیقی

گل غلط غنچے غلط خار غلط” پر 1 تبصرہ

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s