جانے کیا مصلحت ہے جینے میں

باقی صدیقی ۔ غزل نمبر 113
دل ٹھہرتا نہیں ہے سینے میں
جانے کیا مصلحت ہے جینے میں
یہ تمنا، یہ دل معاذاﷲ
آبگینہ ہے آبگینے میں
زخم پر زخم کھائے جاتے ہیں
کس کا دل ہے ہمارے سینے میں
زندگی نے ہزار حجت کی
خون کا ایک گھونٹ پینے میں
موج طوفاں کو دیکھ کر باقیؔ
ناخدا چھپ گیا سفینے میں
باقی صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s