کِنھے اوہدی چپ دا، کنگن شیشہ توڑیا

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 104
نھیرے دے وچ بیٹھیاں، کنّھے ہتھ مروڑیا
کِنھے اوہدی چپ دا، کنگن شیشہ توڑیا
کیہ کھٹیا فرہاد وی، دس کے ہک دے زور نوں
لا کے نال پہاڑ دے، اُنج ائی متّھا پھوڑیا
خورے کنی وار میں، وچ خلاواں لٹکیا
امبر مینتھوں دُور سن، دھرتی سی منہ موڑیا
کُجُھ یاداں سن ہانیاں، اوہ وی انت پُرانیاں
دل دا بوہا کھول کے کونہ کونہ لوڑیا
توں سیں میرے کول یا، اُنج ائی کوئی تصویر سی
خورے کیہا فریم سی، خواباں وچ اکھوڑیا
کجھ تصویراں رنگلیاں، کجھ حرفاں دیاں سنگلیاں
غالب مگروں ماجداُ اساں وی کیہ جوڑیا
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s