نسدیاں واواں، سُکھ سائیں دی، کوئی نہ خبر لیان

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 54
راتاں سُفنے، دن بے سُخنے، چُپ چُپ لنگھدے جان
نسدیاں واواں، سُکھ سائیں دی، کوئی نہ خبر لیان
کنّے ائی بول نگاہواں پچِھے، اپنا آپ لُکان
کِنیاں ائی گلاں، دِل چوں اُٹھ کے، ہوٹھاں تے رُک جان
شام پوے تے، رات ہنیری، دِسّے شوہ دریا
دل بُوٹے تے، چڑیاں وانگوں، سدھراں شور مچان
اپنے آپ، قیامت بن گئی، انساناں دی سوچ
دُور کھلوتا، بِٹ بِٹ ویکھے، بے دوشا اسمان
سوچ سمجھ کے، گھولن والے، سانہواں دے وچ زہر
ہف ہف جیئوندے، لوکاں نوں وی، نہ پئے تک سُکھان
جھولی وچ انگیارے بھر کے، کھیڈے موت دے کھیڈ
لوکی بیٹھ وچاراں کر دے، ماجد بوہت ندان
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s