مُل بُوری ہوئی داکھ دا

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 98
موسم چیت وِساکھ دا
مُل بُوری ہوئی داکھ دا
اُنج ائی بھخیا وہم توں
کُجھُ تے ویہندا چاکھدا
اوہدا ملنا اوکھ سی
میں نئیں ساں ایہہ آکھدا
ایہو خیال سی آپنا
ہتھ وی نال نہ ٹھاکدا
ایہہ جگ پیا بناوندا
سُرمہ ساڈی راکھ دا
ماجدُ ہُن ارمان کیہ
گئی گواچی ساکھ دا
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s