لنگھدا ویلا، کی کی قہر کماندا اے

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 9
امبریں چڑھیاں گُڈیاں، کھوہ لے جاندا اے
لنگھدا ویلا، کی کی قہر کماندا اے
آوندے دناں دا سورج، جدوں خیالاں میں
اگ دا اِک لنبو، اکھیں لہراندا اے
جیہڑا بیں وی پھاڑے تہواں خاک دیاں
انت سمے نوں، اپنا تن کٹواندا اے
وَیہندیاں وگدیاں، حال وی پرت کے پُچھدا نئیں
پانی، کنڈھیاں نوں، اِنج ائی ترساندا اے
کی کی کڑکے بدل پر، نچڑن مگروں
امبراں تے، ست رنگیاں پینگاں پاندا اے
نِدھرانے نے، پِٹ جانا ایں،کیوں جے اوہ
ہیٹھلے کنڈھیوں، پانی نُوں گدراندا اے
دِتّے لکھ فریب، بہاراں نے فِر وی
جیئوڑا ساڈا، پھُلاں نُوں سدھراندا اے
کجیا جاوے، دُکھ دے پالے کورے توں
جو منظر وی، اکھیاں نُوں گرماندا اے
اوہ کی آس سی خورے، جس دے ٹُٹن توں
ماجدُ، مکھ وِکھاون تُوں، شرماندا اے
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s