فیروی ایس بے مہر زمانے توں، نئیں پلّہ چُھٹیا

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 82
کِنیاں نوں ادھ راہ ایس رکھیا، کِنیاں نوں ایس لُٹیا
فیروی ایس بے مہر زمانے توں، نئیں پلّہ چُھٹیا
دکھ دے ٹولے روکن لئی، جھل پِٹ پِٹ کے تھکیوسے
کچ سمجھ کے ہنجواں نوں، پیا مُفتی راہ راہ کُٹیا
عشقے نال جنہاں پِت پائی، ایہہ گل اوہ ائی جانن
کس کس نک دی تریلی پھٹی، کس کس دا دم گھٹیا
اج اُس چشمے چوں پئے وگدے، شوہ دریا ہر پاسے
کل جس چوں، غم پانی وانگوں، قطرہ قطرہ پھٹیا
کیہ غیراں، کیہ اپنیاں کیتی، ماجد کیہ کجھ دسئیے
ایس دل نوں رَل مِل کے سبھناں، وارو واری لُٹیا
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s