فِر ویلے نے، کدھرے کُونجاں لُٹیاں نیں

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 106
وِچ فضاواں، فر کُجھ چیکاں اُٹھیاں نیں
فِر ویلے نے، کدھرے کُونجاں لُٹیاں نیں
سجری رُتوں، فِر اُبکائیاں آؤن پیّاں
پچھلیاں کسّاں وی حالے، نئیں ٹُٹیاں نیں
فِر مچھیاں نُوں، وہم ایں اَنّ بھت لبھنے دا
فیر شکاریاں، جل چ کُنڈیاں سُٹیاں نیں
سُکھ دے چُر مُر بوٹے، عاری نِسرن تُوں
دُکھ رُکھ تے، فِر سجریاں شاخاں، پھُٹیاں نیں
نرم ہوا، فر شاید، کدھرے رُس گئی اے
جھکھڑاں، بُوریاں شاخاں، مُڈھوں پُٹیاں نیں
لفظ نہ سانبھے جان، سیاہی رُکدی توں
وچ دوات، کِسے جنج کِرچاں کُٹیاں نیں
دھرت ٹِنانے نیں ماجدُ، ایہہ حرف ترے
ایہہ نُوری لیکاں، کِس امبروں چھٹیاں نیں
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s