راتیں اوہدے پیار دا نشہ ہور دا ہور سی

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 77
کمرہ سی مشکاوندا، یا فر چپ دا شور سی
راتیں اوہدے پیار دا نشہ ہور دا ہور سی
مَیں وی کھچ نہ سکیا، کوئی تصویر اُس یار دی
قدسی ویل خیال جیہی عجب جیہی کجھ ٹور سی
چلنا کھُریوں پب تے، مر گئے لوگ ایس ڈھب تے
مہکی ہوئی بہار دا، کیہ چوطرفہ زور سی
اِک دوجاگھیں کھِچ توں، ہے سی کُجھ بے آبیا
جامہ اوہدے پیار دا، اُنج تے نواں نکور سی
ڈٹھا ماجدُ یار وی، اکھیوں نِیر چوآوندا
مَیں تے ایہو سی جانیا، اینویں جیہا کوئی چھوہر سی
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s