دوش اساڈیاں چاہواں تے

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 27
پُھل کھڑے سن راہواں تے
دوش اساڈیاں چاہواں تے
روگ دِلاں دے بُجھدے نئیں
کُھنے ہوئے نیں باہواں تے
کدھروں تے کوئی وَگدی وا
دُھوڑ جمی ایں ساہواں تے
توں تے جویں مشوم ائی سیں
اِکو دوش نگاہواں تے
اج مینوں وی آوے رون
ماجدُ تیریاں چاہواں تے
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s