خوشیاں نظروں لُک لُک جاون، جیئوں ناں لگی مانگ

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 40
جیئون چرائے اکھیاں سانتھوں، کیہ جیون دی تاہنگ
خوشیاں نظروں لُک لُک جاون، جیئوں ناں لگی مانگ
سُکھ چ دُکھ دیاں تاہنگاں سُکھ چ سدھراں دُکھ دیاں رہن
سچ کہندے نیں جوگ عشقے دی، ہوندی اُوٹ پٹانگ
کٹ وٹ پچھے، روپ چن دا، جیونکر لُٹیا اج
انج تے لاہی سی کسے نہ اج، تائیں رُکھاں اُتوں چھانگ
لکھ مٹیاراں اج پیاں کوکن، کل ہے سن اک دو
جیئون جنہاندا روگن ہارا، ہیراں سسیاں وانگ
ہُن اکھیاں دیاں پلکاں، کنبدے کنڈھے، کم نہ آؤن
ماجدُ لہندیاں لہندیاں لہسی، ول دریا دی کانگ
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s